300-320 certification material 1Z0-061 book CCBA course 98-367 software tutorial

پیر‬‮   17   جنوری‬‮   2022


لڑکا جیسا بھی ہو بس پیسے والا ہونا چاہیے ۔۔ 3 ہزار رشتے کرانے والی مسسز شوکت نے لڑکے اور لڑکی والوں کی ڈیمانڈ بتاتے ہوئے بڑے انکشافات کر دئیے


شادی کے لیے بہترین جیون ساتھی کے انتخاب سے مشکل ترین لمحہ ہوتا ہے،

 

مگر آج کے دور میں میرج بیورو نے اس مشکل کو آسان بنا دیا ہے۔ ہم اس خبر میں آپ کو ایک ایسی ہی خاتون کے بارے میں بتائیں گے جو کہ میرج بیورو چلاتی ہیں۔رشتہ کرانا ایک ذمہ داری کا کام ہے جو کہ ملتان کی مسسز شوکت بہترین طرح سے جانتی ہیں۔ مسسز شوکت گزشتہ کئی سالوں سے رشتہ کرا رہی ہیں، اور انہیں یہ کام کرنے میں کوئی پریشانی بھی نہیں ہوئی۔ مسسز شوکت یہ کام بنا معاوضے کے کرتی ہیں، جبکہ اب تک وہ 3 ہزار سے زائد رشتے کرا چکی ہیں۔ مسسز شوکت نے اگرچہ یہ کام فی سبیل اللہ کیا مگر انہیں سماج ایک ایسا بدتر چہرا دکھا جس میں لڑکی اور لڑکے والوں کی ڈیمانڈز بھی سنی پڑتی تھیں۔مسسز شوکت کا کہنا تھا کہ میں نے ایک رشتہ کرایا تھا، جو کہ میری زندگی کا پہلا رشتہ تھا، وہ اس حد تک کامیاب ہوا کہ میری شہرت ہی بن گیا۔ اس کے بعد سے اب تک رشتہ کرا رہی ہوں۔ مسسز شوکت کے اب لاہور، خانیوال اور ملک کے دیگر شہروں میں بھی رابطے ہیں اور وہ رشتے کراتی ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ یہ سب اللہ کا کرم ہے جو لوگ مجھ پر اعتماد کرتے ہیں۔لوگوں کے اعتماد سے متعلق مسسز شوکت کا کہنا تھا کہ میری کوشش ہوتی ہے کہ لوگوں کے اعتماد کو ٹھیس نہ پہنچاؤں اور انہیں ایمانداری کے ساتھ رشتوں کے بارے میں بتاؤں۔ رشتہ کرانے کی فیس نہ لینے سے متعلق مسسز شوکت نے بتایا کہ میری کوشش ہوتی ہے کہ میں لوگوں کی

 

دعاؤں کا حصہ بنوں کیونکہ پیسہ تو ہر ایک کے پاس ہوتا ہے۔لڑکی اور لڑکے والوں کی الگ الگ ڈیمانڈز ہوتی ہیں، اسی لیے ان کی شادی میں دیر ہوتی ہے اور عمریں گزر رہی ہوتی ہیں۔ اگر کسی کا لڑکا لائق ہو جائے تو وہ سارا جہاں ڈھوںڈتی ہے کہ کہیں سے اسے خوبصورت، کم عمر اور زمین جائیداد بھی لے کر آئے۔ اس صورتحال میں لڑکی کو تعلیم دیں یا یہ سب دیں۔ دراصل ایسے لوگ اپنے بیٹے کو کیش کرانا چاہتے ہیں جو کہ بہت ہی غلط بات ہے۔ مسسز شوکت اس وقت افسردہ ہو گئیں جب انہوں نے ایک ایسی صورتحال کی طرف نظر ڈالی جو کہ لڑکی والوں کے لیے تکلیف دہ ہوتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ لڑکے والے لڑکی کے گھر جاتے ہیں، لڑکی دیکھتے ہیں، مگر لڑکی کے والے لڑکے کو نہیں دیکھ پاتے۔ کیونکہ لڑکے والے اپنی پسند کی لڑکی تلاش کرتے ہیں، لیکن لڑکی والوں کو لڑکا پسند کرنے کا اختیار نہیں ہوتا۔ان کا لڑکے والوں سے متعلق کہنا تھا کہ لڑکے والوں کو اللہ کی سزا ہے، وہ ایک لڑکی کو ٹھکراتے ہیں، اسی لیے وہ جگہ جگہ گھومتے ہیں، لیکن ان کے دماغ میں ان کی پسند کی لڑکی بیٹھتی ہی نہیں ہے۔ جبکہ رشتہ کے حوالے سے آنے والے لڑکے والے اور لڑکی والے

 

انوکھے نخرے رکھتے ہیں۔ مسسز شوکت نے بتایا کہ لڑکی والے کہتے ہیں کہ اکلوتا لڑکا ہو، جس کے بہن بھائی نہ ہوں، جن کے ماں باپ مر چکے ہوں، کماتا ہو، ٹھیک ٹھاک ہو۔ لیکن کہیں نا کہیں تو سمجھوتہ کرنا پڑتا ہے، یہ بات لڑکی والے نہیں سمجھتے۔جبکہ لڑکے والے کہتے ہیں کہ لڑکی کار کوٹھی والی ہو، جو ہماری خدمت بھی کرے۔ لڑکی کے نین نقش اچھے ہوں، خوبصورت ہو اور چلتی پھرتی بھی صحیح ہو۔ اب لڑکے والے چاہتے ہیں کہ فلاں فلاں اداکارہ کی طرح لڑکی خوبصورت ہو۔ میں رشتہ کراتے وقت کہہ دیتی ہوں کہ لڑکے اور لڑکی والوں کو جانتی ہوں مگر جان پہچان اور تسلی آپ نے خود لینی ہے، اسی لیے تسلی دونوں فیملیز خود کرتی ہیں۔ ڈاکٹر، اینجینئیر، بڑا کاروبار تب ہی لڑکی کا رشتہ کریں گے، اسی طرح لڑکے والے بھی پڑھی لکھی اور ڈاکٹر لڑکی کو فوقیت دیتے ہیں۔اگر لڑکا کالا ہے، جیسا بھی ہو مگر وہ امیر ہے تو ہی رشتہ کرتے ہیں۔ اب کوئی شرافت کو نہیں دیکھتا، ہر کوئی پیسہ دیکھتا ہے۔ اچھی بھلی خوبصورت لڑکی گھر پر بیٹھی ہے، لڑکے والے کہتے ہیں کہ یہ کوئی لڑکی ہے؟ میں کہتی ہوں کہ یہ تو میری بیٹیوں جیسی ہے۔ مسسز شوکت اگرچہ ان

 

جیسے لوگوں کو بالکل پسند نہیں کرتیں مگر وہ اب بھی پُر امید ہیں کہ وہ ہر ایک بیٹی کو ایک محفوظ سسرال فراہم کرنے میں مدد کر سکتی ہیں۔


اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین ویڈیو
کوہلی کی غصے سے گرائونڈ میں داخل ہونے کی کوشش...
بھارتیوجھوٹ بولنابندکرو،آپ نے پاکستان کاکوئی ایف 16نہیں گرایا...
Most Beautiful Azan -Mashallah

دلچسپ و عجیب

صحت

Copyright © 2017 www.forikhabar.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us